کیا کرونا وائرس 18 مئی کو ختم ہو جا ئے گا ؟

10
469
coronavirus

جاوید چودھری

سینیر تجزیہ گار جاوید چودھری نے کہا ہے کہ  جو بات احادیث اور قرآن کی روشنی میں ہے  وہ بلکل درست ہے مسلمانوں کا تو یہ عقیدہ ہے ہی اور اب سائنسی تحقیق سے یہ بھی یہ بات ثابت ہو رہی ہے ۔ جاوید چودھری نے کہا  کہ اگر ہم قرآن و حدیث کی بات کریں تو یا کرونا وایرس کو قرآن و حدیث سے دیکھین تو یہ وائرس ۱۸ مئی کو ختم ہو جاے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم حضرت محمد ﷺ کی احادیث پر غور و فکر کر رہےہیں اور ان احادیث کا تعلق کہیں نہ کہیں کرونا وائرس کے ساتھ  منسلک کر رہے ہیں۔جو احادیث زیر بحث ہیں ان میں رسول پاک ﷺ نے پہلے ہی بتا دیا تھا کہ ایک بیماری ایسی آے گی جو موسم بہار کے آخر میں خود  ہی ختم ہو جاے  گی۔

سینیر  تجزیہ گار جاوید چودھری  کا کہنا ہے کہ  اگر ماہر فلکیات کے نتایج کو درست مان لیا جاے  تو ہم یہ کہ سکتے ہیں کہ کرونا وائرس چاہے جتنا بھی اس وقت مضبوط کیوں نہ وہ اگر ہم احادیث کی روشنی سے دیکھیں تو یہ جلد ہی ختم ہو جاے گا۔ مئی کے آخری ہفتے سے یہ وبا ختم ہونا شروع ہو جاے گی اور امید ہے کہ جون میں یہ وبا مکمل طور پر ختم ہو جاے گی

حدیث نبوی ﷺ

جاوید چوہدری نے ایک حدیث نبوی ﷺ بھی بیان کی جس کا مفہوم یہ ہے: حضرت ابو ہریرہ سے روایت ہے کہ حضور ؐ نے فرمایا جب صبح کے وقت ثریا ستارہ طلوع ہوتا ہے اس وقت جو قوم جس بھی بیماری میں مبتلا ہوتی ہے اس کی شدت میں کمی آجاتی ہے ۔ جاوید چوہدری کا کہنا ہے کہ یہ ستارے بہار کے آخر میں نظر آتے ہیں ۔مگران احادیث پر علماء کے درمیان کافی  اختلاف پایا جاتا ہے۔ جاوید چوہدری کا کہنا ہے کہ ماضی میں بھی جو ایسی وبا انسانوں میں منسلک ہوی ہیں وہ بھی مئی اور جون میں ختم ہونا شروع ہوئیں تھیں ۔

کرونا وایرس ایک مہلک وبا ہے جو کچھ مہینوں میں ہی بہت بری طرح انسانی جانوں کو نگل چکی ہیں اور اب بھی اس نے پوری دنیا میں اس نے اپنے پنجے گاڑے ہوے ہیں مگر وقت کی سب سے اچھی بات یہ ہے کہ وہ گزر جاتا ہے  اور اگر لوگ اس برے وقت میں صبر و  تحمل سے کام لیں تو نہ صرف وہ خود کو بلکے اپنے قریبی ساتھیوں کو بھی اس وبا سے محفوظ رکھ سکتے ہیں۔

مزید پڑھیں: کیا کورونا وائرس آن لائن تعلیم کو وائرل کر دے گا؟

10 COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here